Ads are placed to support costs of domain and hosting. All Ads are random and are not chosen by Nohay Lyrics: Sorry for any inappropriate ads.

Zakhm Chupana Urdu Lyrics| Mir Hasan Mir 2022


اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

کسطرح سے  دیکھی گی وہ ہم دونوں کی غربت

وہ روئے گی تو ائے گی خیموم میں قیامت

میں زخم چھپا لیتا ہوں تم آنسو چھپانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

تصویر محمد ہے بڑی ںازوں سے پالی

مر لائے نہ خیمے میں میری پالنے والی 

ہرگز  یہ میرا بات سینے سے ہٹانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

 اس بار شہادت کو اٹہا لے گی امامت

بھائی سے چھپانا نہیں ایک بھائی کی غربت

سجادؑ کو تفصیل شہادت کی سنانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

ممتا میرے لاشے پہ انھیں لائے گی بابا

بے ساختہ وہ مجھ سے لپٹ جائے گی بابا

ممکن ہو تو لاشے سو انہیں دور ہٹانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

جو خاک بھری ہے میرے بھالوں سے چھڑا دو

چہرہ پہ لہو ہے میرے دامن سے ہتا دو

وہ زد جو زیادہ کرے بس شہرہ دیکھانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

یوں ستمگار نے مارا میرے بابا

پہلو بھی شکستہ ہے میرے بابا

یاد آیے گا دادی کا انہیں زخم پرانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اس حال میں دے صبر ڈدا بنتِ علی کو

اکبرؑ کا سلام آخری کہہ دینا پھوپھی

زندہ برا مشکل ہے میرا خیمے میں جانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

ہر بات میری آپکی بہنوں کے لئے ہے

بس اہک وصییت صغرٰی کی لئے ہے

لاکر خط صغرٰی مہرے لاشہ پہ سنانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

دم تورتے اکبرؑ کو نہ پہنچے کوئی صدمہ

منہ پھیڑ کے یوں روتے معلوم ہے بابا

پر سامیے سادات کے آنسو نہ بہانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اس وقت ہوا ہچکی میں تکلم ھوا محشر

ارے اکبرؑ نے کہا ھاتھ پیشانی پہ رکھ کر

ہمیں دور ہے جانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے  سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

  کھائی ہے انکو نہ بتانا 

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

کم طرح سے  دیکھی گی وہ ہم دونوں کی غربت

وہ روئے گی تو ائے گی خیموم میں قیامت

میں زخم چھپا لیتا ہوں تم آنسو چھپانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سینہ کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

تصویر محمد ہے بڑی ںازوں سے پالی

مر لائے نہ خیمے میں میری پالنے والی 

ہرگز  یہ میرا بات سینے سے ہٹانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سینہ کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

ماری یے سینہ سینے پہ یہ کہہ کے لعین نے

پھولوں کی طرح پالہ یے اکبرؑ کو پھوپھی نے

  لاشہ پہ عبا خیموں سے پہلے ہی اڑانا

اکبرؑ نے سینہ کھائی ہے انکو نہ بتانا 

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

کم طرح سے  دیکھی گی وہ ہم دونون کی غربت

وہ روئے گی تو ائے گی خیموم میں قیامت

میں زخم چھپا لیتا ہوں تم آنسو چھپانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سینہ کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

تصویر محمد ہے بڑی ںازوں سے پالی

مر لائے نہ خیمے میں میری پالنے والی 

ہرگز  یہ میرا بات سینے سے ہٹانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سینہ کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

ماری یے سینہ سینے پہ یہ کہہ کے لعین نے

پھولوں کی طرح پالہ یے اکبرؑ کو پھوپھی نے

  لاشہ پہ عبا خیموں سے پہلے ہی اڑانا 

اکبرؑ نے سینہ کھائی ہے انکو نہ بتانا 

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اس بار شہادت کو اٹہا لے گی امامت

بھائی سے چھپانا نہیں ایک بھائی کی غربت

سجادؑ کو تفصیل شہادت کی سنانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

ممتا میرے لاشے پہ انھیں لائے گی بابا

بے ساختہ وہ مجھ سے لپٹ جائے گی بابا

ممکن ہو تو لاشے سو انہیں دور ہٹانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

جو خاک بھری ہے میرے بھالوں سے چھڑا دو

چہرہ پہ لہو ہے میرے دامن سے ہتا دو

وہ زد جو زیادہ کرے بس شہرہ دیکھانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

یوں ستمگار نے مارا میرے بابا

پہلو بھی شکستہ ہے میرے بابا

یاد آیے گا دادی کا انہیں زخم پرانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اس حال میں دے صبر خدا بنتِ علی کو

اکبرؑ کا سلام آخری کہہ دینا پھوپھی

زندہ برا مشکل ہے میرا خیمے میں جانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

ہر بات میری آپکی بہنوں کے لئے ہے

بس اہک وصییت صغرٰی کی لئے ہے

لاکر خط صغرٰی مہرے لاشہ پہ سنانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

دم تورتے اکبرؑ کو نہ پہنچے کوئی صدمہ

منہ پھیڑ کے یوں روتے معلوم ہے بابا

پر سامیے سادات کے آنسو نہ بہانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اس وقت ہوا ہچکی میں تکلم ھوا محشر

ارے اکبرؑ نے کہا ھاتھ پیشانی پہ رکھ کر

ہمیں دور ہے جانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

اکبرؑ نے  سیناں کھائی ہے انکو نہ بتانا

بابا پھوپھی اماں سے میرا زخم چھپانا

Leave a Reply

error: Content is protected By the Owner of Nohay Lyrics !!